آؤشوٹس

0
580

عاطف توقیر کی نظم ’’آؤشوٹس‘‘

ان لاکھوں یہودیوں اور دیگر افراد کے نام جو قوم پرستی، نسل پرستی اور نفرت انگیزی کی بھینٹ چڑھ کر مارے گئے۔ یہ نظم ہر اس مظلوم کا نوحہ ہے، جس کا مذہب، رنگ، نسل، عقیدہ، فرقہ یا قومیت تو مختلف ہو سکتی ہے، مگر دکھ ایک سے ہیں۔ برما، سینکیانگ، کشمیر، افغانستان، یمن، عراق، شام، کردستان، فلسطین، نائجیریا، سوڈان، جنوبی سوڈان، برونڈی، وسطی افریقی جمہوریہ، ایتھوپیا، صومالیہ اور ظلم و جبر کی اس نہ ختم ہونے والی فہرست، جہاں آج بھی انسانیت سسک سسک کر زندگی کے حق کی دہائیاں دے رہی ہے۔

یہ نظم ان افراد کے نام بھی ہے، جو پرامن انداز سے اپنے حقوق کی جدوجہد کر رہے ہیں اور ہر طرح کے ظلم کے باوجود سینہ تان کر ظالم کے سامنے کھڑے ہیں۔

آؤشوِٹس

میرا نام سارہ ہے

سارہ گٹن برگ

میرا جرم اتنا سا ہے کہ مجھے اک یہودی گھرانے میں پھونکا گیا تھا

میرے باپ دادا یہودی تھے

وہ بھی اسی جرم میں ڈاخاؤ جا چکے ہیں

میں کیسے اتاروں بدن سے عقیدہ

عقیدہ جو میں نے چنا بھی نہیں ہے

مجھے نوچنے والے مردار خوروں نے میرا بدن مجھ کو لوٹا دیا ہے

مگر پیراہن میرے تن پر نہیں ہے

میں بانہوں سے سینہ چھپاتے ہوئے

دونوں ٹانگیں سکیڑے

کئی دوسرے اپنے جیسے

بدن ڈھانپے مجرموں کی قطاروں میں شامل ہوں

اور جانتی ہوں

کہ ان میں سے ہر ایک کا جرم یکساں ہے

یہ سب

عہدنامہء اولین کے تصور کی تعبیر میں

مصر تا اصفحاں

ریگ زارِ حجازی سے اسپین تک

پیراہن چھین کر

بازوؤں سے بدن ڈھانپتا چھوڑ کر

از ازل تا ابد

ہر جگہ

ہر زمیں سے نکالے گئے

سب کے سب آؤشوِٹس

کے زہریلے تیزاب میں

غسلِ آخر کی سنگین راہوں

سے کٹتے ہوئے

سانس لینے کی خواہش میں

خود اپنے ہاتھوں سے اپنے گلے نوچتے

باقی ماندہ بدن

اجتماعی قبرگاہ کو سونپتے

موسیٰ موسیٰ

کبھی ابراہیم اور یعقوب کے معجزوں کو پکارا کیے

سب بنی اسرائیلی قبیلے سے ہیں

وہ قبیلہ جسے آج تک

کوئی بھی سرزمیں

سینچتی ہی نہیں

آؤشوِٹس اک اذیت کا مرکز ہے

لیکن

تسلسل بھی ہے

ناقبولیتوں کو

عدم زندگی کا

تمسخر کا تحقیر کا

اس سے پہلے کی تاریخ بھی

صرف گنتی کا

اعداد کا کھیل تھی

اور اب بھی یہاں

لاکھ دو لاکھ کی بحث میں

جسم پر

جسم کے اندروں

میرے گھاؤ

میری روح کے بل

میری بے زمینی

میرے ننگے پاؤں

میری موت

میری اذیت

کی تفصیل کھو جائے گی

میں کہ سارہ گٹن برگ

بس اک تسلسل ہوں

اس بستی رائیگانی کی زنجیر کا

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here