ایک عام بیانیہ

زوہیب احمد پیرزادہ

2011 میں، میں گورنمنٹ کالج میں پڑھا کرتا تھا. ہم تکریباﹰ40 سے 50 تک طلبہ ساتھ ساتھ تھے۔ ہمارے بہت سے اساتذہ اعلیٰ تعلیم یافتہ اور اپنے کام سے مخلص تھے۔ وہاں پر ایک لڑکا پڑھنے کے آیا کرتا تھا، جو تعلیم اور علم  حاصل  کرنے کے لیے پرجوش تھا۔ سوال کرتا، اپنا کام کرتا اور دل جمعی پڑھتا نظر آتا۔  پھر یوں ہوا کہ کچھ مہینے بعد وہ ہمیں نظر نہیں آیا۔ ایک مہینہ گزر گیا، مگر وہ نہیں آیا۔ اساتذہ پوچھتے رہتے کہ وہ لڑکا کیوں نہیں آتا مگر کسی کو کچھ معلوم نہیں تھا؟ 

 چوں کے وہ میرے  ہی گاؤں سے تھا، تو  ایک دن مجھے بازار میں مل گیا۔ میں نے دیکھتے ہی  پوچھا، ’’کدھر غائب ہو، کالج کیوں نہیں آتے، کورس بہت آگے نکل گیا ہے۔‘‘ 

تو ہسنتے ہوئے کہنے لگا، ’’چھوڑو اس بات کو، تم اپنا بتاؤ، تمہاری پڑھائی کیسے جا رہی ہے۔‘‘

میں نے جواب دیا، ’’بہت اچھی‘‘ اور پھر سے اپنے سوال کی طرف آگیا، ’’بتاؤ بھی، کیوں نہیں آتے؟‘‘

بس پھر اس کی ہنسی رفتہ رفتہ چہرے سے اڑنے لگی اور  اچانک ہی اس کا چہرہ مایوسی اور مجبوری کی کہانی میں بدل گیا۔ کہنے لگا، ’’یار تمہیں تو معلوم ہے کے مجھے پڑھنے کا بہت شوق ہے، مگر ہمارا پیر جو یہاں کا وڈیرہ ہے، مجھے پڑھنے کی اجازت نہیں دیتا، مجھے اس کے ڈیرے پر کام  کرنا ہوتا ہے۔‘‘

میں خاموش ہوگیا، اس موضوع پر فقط خاموشی پڑی رہنے دی۔ پھر میں نے بالآخر کہا، ’’آؤ آدم جی کی چائے پیتے ہیں۔‘‘

کچھ سال بعد میں ماسٹرس کے لیے اسلام آباد چلا گیا اور وہ لڑکا وہیں کام کرتا رہا اور شاید آج بھی وہیں کام کرتا ہو۔

میں جب اسلام آباد میں جب آیا اور یونیورسٹی میں ابھی کچھ ہی دن گزرے تھے، تو یہاں ایک بیانیہ سننے کو ملا، وہ یہ تھا کہ لوگ اس وجہ سے نہیں پڑھتے، کیوں کے وہ خود پڑھنا نہیں چاہتے، وہ خود سست اور ناکارہ ہیں۔ سب انہی کی غلطی ہے اور حقیقت یہ ہے کہ اس بیانیے اور وڈیروں اور سیاستدانوں کے بیانیے میں کوئی فرق نظر نہیں ہے۔

بار بار بحث کے دوران، مرے منہ پر بل گیٹس کا ایک حوالہ مار دیا جاتا رہا کہ اگر آپ غریب پیدا ہوتے ہیں، تو یہ آپ کی غلطی نہیں، لیکن اگر آپ غریب مر جاتے ہیں، تو یہ آپ کی غلطی ہے۔‘‘

اور یہ بیانیہ مجھے کسی نہ کسی صورت اب بھی سننے کو ملتا رہتا ہے۔ حیرت اس بات پر نہیں ہوتی کہ یہ بات کوئی غیرتعلیم یافتہ یا ناخواندہ آدمی کر رہا ہوں، حیرت اصل میں اس پر ہوتی ہے کہ اچھے خاصے پڑھے لکھے افراد بھی یہ بیانیہ دوہراتے نظر آتے ہیں۔  انہیں یہ کون سمجھائے کہ دنیا بھر میں  ہر روز  ہزاروں بچے غیر محفوظ پانی سے مر جاتے ہیں،  وہ غریب پیدا ہوتے ہیں اورغریب مر جاتے ہیں، اور اس طرح غریب مر جانے میں ان کی کوئی غلطی نہیں۔ انہیں یہ کون سمجھائے کہ دنیا میں آٹھ امیر ترین افراد کے پاس اتنا سرمایہ ہے، جتنا دنیا کی پچاس فیصد آبادی کے پاس مجموعی طور پر ہے۔  انہیں یہ کون سمجھائے کہ پاکستان میں 24 ملین بچے تعلیم سے محروم ہیں۔

یہ وہی بیانیہ ہے، جس سے وڈیرے، جاگیردار اور سیاسی اشرافیہ اور بھی زیادہ مضبوط ہوتے جا رہے ہیں۔  اس بیانیے سے اصل میں اسی اشرافیہ کو فائدہ ہے۔ بل گیٹس اور مالی طور پر دیگر کامیاب افراد کو مثالوں کے طور پر پیش کر کے  پیش کیا جاتا ہے اور ہم سے کہا جاتا ہے، ’’بھائی، آپ کیوں محنت نہیں کرتے اور بل گیٹس نہیں بن جاتے‘‘۔

حقیقت مگر یہ ہے کہ اکثریتی آبادی  بنیادی ضروریات تک سے  محروم ہے۔  کارل مارکس نے کہا تھا کہ ہر دور میں، غالب خیالات حکمرانوں ہی کے ہوتے ہیں، جن کے قبضے میں مادی پیداوار کے ذرائع ہوتے ہیں، وہ ہی ذہنی پیداوار کو کنٹرول کرتے ہیں۔

ایسے بیانات میڈیا، تعلیم اور دیگر ذرائع سے پھیلائے جاتے ہیں اور پھر لوگ بھی یہی زبان بولنے لگتے ہیں اور مظلوم کو گناہ گار بنا کے پیش کیا جاتا ہے اور جو مجرم اور ظالم ہیں ان پر نہ کوئی حرف آتا ہے نہ الزام۔

ایک جاگیردار، جس کے پاس 7 ہزار ایکڑ زمین ہے، سینکڑوں خاندان چلاتا ہے۔ اپنا ظلم اور استحصال جاری رکھنے کے لیے سیاست میں شامل ہوتا ہے۔ ان کے ساتھ مل جاتا ہے، جو اس سے بھی زیادہ طاقتور ہوتے ہیں۔ لوگوں کا جاپل رکھا جاتا ہے، ان سے زبردستی ووٹ لیا جاتا ہے اور یوں ظلم قائم رہتا ہے۔ اس کے بعد ان لوگوں کو سننے کو فقط یہی ملتا ہے کہ وہ اصل میں خود ناکارہ، سست، جاہل ہیں اور خود محنت نہیں کرتے۔

 کچھ کہو تو کہتے ہیں، ’’بھائی، یہی تو مصیبت ہے، اپ لوگ اپنی غلطی نہیں مانتے۔‘‘

سست، ناکارہ اور جاہل ہونا، بیماری نہیں ہیں، یہ بیماری کے نتائج ہیں اصل بیماری جاگیرداری اور سرمایہ دارانہ نظام ہے۔

4438 COMMENTS

  1. You really make it seem so easy with your presentation but I find this matter to be actually something which I think I would never understand.
    It seems too complicated and extremely broad for me. I’m looking forward for your
    next post, I will try to get the hang of it!

  2. Hmm is anyone else encountering problems with the images on this blog loading?
    I’m trying to figure out if its a problem on my end or if it’s the blog.

    Any feed-back would be greatly appreciated.

  3. Write more, thats all I have to say. Literally, it seems as though you relied on the video to make your point.
    You clearly know what youre talking about, why throw away your
    intelligence on just posting videos to your blog when you could
    be giving us something informative to read?

  4. Wonderful blog! I found it while browsing on Yahoo News.
    Do you have any suggestions on how to get listed in Yahoo News?
    I’ve been trying for a while but I never seem to get there!
    Many thanks

  5. Normally I don’t learn article on blogs, but I wish to say that this
    write-up very compelled me to take a look at
    and do it! Your writing style has been surprised
    me. Thank you, very great post.

  6. Премьера «Матрицы-4», которая, по слухам, называется «Воскрешение», выйдет на большие экраны 16 декабря 2021 года Матрица 4 kino Дата начала проката в США: 22.12.2021. Оригинальное название: The Untitled Matrix Film.

  7. Премьера «Матрицы-4», которая, по слухам, называется «Воскрешение», выйдет на большие экраны 16 декабря 2021 года Матрица 4 смотреть Дата выхода. Россия: 16 декабря 2021 года; США: 22 декабря 2021 года

  8. Главные герои картины «Матрица 4» проснулись и начали бороться, после чего появилось сопротивление Матрица 4 кино Вся информация о фильме: дата выхода, трейлеры, фото, актеры.

  9. Warner Bros. представили первый трейлер нового фильма в серии «Матрица», который вызвал больше вопросов, чем ответов. Матрица 4 просмотр Дата выхода. Россия: 16 декабря 2021 года; США: 22 декабря 2021 года

  10. Фильм будет называться The Matrix: Resurrections («Матрица: Воскрешения»), и сюжетно он близок к первой картине Матрица 4 kino Вся информация о фильме: дата выхода, трейлеры, фото, актеры.

  11. [url=https://viagrabmed.online/]viagra 50 mg online purchase[/url] [url=https://albuterolmed.online/]buy albuterol without prescription[/url] [url=https://drugtadalafil.online/]buy tadalafil 5mg[/url]

  12. Британця турбує той факт, що українець є лівшею. Чемпіон WBA, IBF, WBO і IBO в суперважкій вазі Ентоні Джошуа (24-1, 22 КО) назвав головну перевагу свого опонента в майбутньому поєдинку – українця Олександра Усика (18-0, 13 KO Джошуа Усик смотреть онлайн Усик вирушив до Лондона на бій із Джошуа – Новости Спорта

  13. Также в Лондоне состоялась традиционная битва взглядов. Накануне боя Джошуа – Усик в Лондоне состоялась церемония взвешивания спортсменов. Украинец показал 100 кг, а британский чемпион – 109 Все подробности на сайте Усик Джошуа смотреть онлайн Екс-суперник Усика вірить в українця в бою з Джошуа — МЕТА

  14. Усик — Джошуа. Букмекери зробили прогноз на бій. Редкач аргументував такий сміливий прогноз тим, що попередні олімпійські чемпіони, яких побив Джошуа, були на заході кар’єри, тоді як Усик Энтони Джошуа Александр Усик Усик — Джошуа: де і коли дивитися бій Вчора 21:49 “Ентоні, привіт. Я тут”: Усик прилетів до Британії і звернувся до Джошуа (відео) 14 вересня 17:32 Секретний бій: Джошуа побив Ф’юрі в 2010-му році — ЗМІ